افراط زر: تعریف، وضاحت، اور مثالیں

افراط زر: تعریف، وضاحت، اور مثالیں

2022-11-22 • اپ ڈیڈ

آج کل ہر خبر کا بنیادی نقطہ مہنگائی کے گرد گومتا ہے، معاشی مضامین اس پر کافی شورمچا رہے ہیں۔ زیادہ تر لوگ ان تمام شائع شدہ معلومات سے الجھن کا شکار ہیں۔ فاریکس مارکیٹ پر، ٹریڈر اس اقتصادی اشارے کی باقاعدگی سے نگرانی کرتے ہیں۔

یہ مضمون آپ کو افراط زر کے بارے میں بنیادی معلومات اور اس سے متعلق ہر چیز کا پتہ لگانے میں مدد کرے گا۔

افراط زر کیا ہے؟

افراط زر کی شرح زر مبادلہ یعنی ایکسچینج ریٹ کی قیمت کا تعین کرنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے، چاہے دیگر عناصر کو بھی مدنظر رکھا جائے۔

سادہ الفاظ میں، افراط زر میں اضافہ اشیا اور خدمات کی قیمتوں میں عام طور ہر اضافے کا سبب ہے۔ جب قیمتیں بڑھ جاتی ہیں، تو اس کا مطلب ہے کہ ایک شخص جو پہلے ایک خاص رقم سے جو خرید سکتا تھا ابھی اسے خریدنے کی سقت میں کمی ہوئی ہے۔ مثال کے طور پر، کل، آپ کے پاس $5 تھے، اور آپ پانچ چاکلیٹ خرید سکتے تھے، لیکن آج، $5 میں، آپ صرف تین چاکلیٹ کے پیکٹ خرید سکتے ہیں، لہذا، اس صورتحال میں، افراط زر زیادہ ہے۔

افراط زر کی اقسام

ہر قسم کی افراط زر نقصان دہ نہیں ہوتی ہیں۔ وہ کمزور سے طاقتور تک مختلف اثرات رکھتی ہیں۔

گرتی ہوئی افراط زر

کم یا ہلکی افراط زر کا مطلب ہے کہ قیمتیں ہر سال 3٪ یا اس سے کم کی شرح سے بڑھتی ہیں۔ فیڈرل ریزرو سمجھتا ہے کہ جب قیمتیں 2٪ یا اس سے کم کی شرح سے بڑھتی ہیں، تو اس سے معاشی ترقی کو فائدہ ہوتا ہے۔ یہ نامیاتی اقتصادی توسیع کا طریقہ ہے۔ یہی وجہ ہے کہ فیڈ افراط زر کی شرح کو ہدف کیطور پر 2٪ پر مقرر کرتا ہے۔

چلتی ہوئی افراط زر

یہ افراط زر کی ایک شدید یا سخت قسم ہے، عام طور پر 3٪ سے 10٪ تک۔ لوگ کل آنے والی زیادہ قیمتوں سے بچنے کیلئے ضرورت سے زیادہ خریدنا شروع کر دیتے ہیں۔ اس سے طلب میں مزید اضافہ ہوتا ہے تاکہ نہ تو سپلائرز اور نہ ہی اجرت برقرار رہ سکتی ہے۔ بالآخر، عام سامان اور خدمات زیادہ تر لوگوں کیلئے بہت مہنگی ہو جاتی ہیں۔

تیزی سے بڑھتی ہوئی افراط زر

جب افراط زر 10٪ اور اس سے زیادہ کی شرح سے بڑھتا ہے تو اس سے ملکی معیشت کو نقصان پہنچتا ہے۔ اس کیساتھ ساتھ غیر ملکی سرمایہ کار اس طرح کے ملک سے گریز کرتے ہیں، اس طرح یہ ملک اہم سرمایہ کاری سے محروم ہو جاتا ہے۔ معیشت متزلزل ہو جاتی ہے، اور حکومتی قیادت کی ساکھ ختم ہو جاتی ہے۔ تیزی سے بڑھتی ہوئی افراط زر کو ہر قیمت پر روکا جانا چاہیے کیونکہ بصورت دیگر یہ معاشی بحران کو جنم دے سکتی ہے۔

تیزی سے بڑھتی ہوئی افراط زر ہائپر انفلیشن کے مقابلے میں زیادہ متواتر اقتصادی رجحان ہے اور وقتاً فوقتاً سب سے زیادہ اقتصادی طور پر ترقی یافتہ ممالک میں بھی اس کا ثبوت ملتا ہے۔ مثال کے طور پر، جنگ کے بعد کے سالوں (1945-1952) اور 1970 کی دہائی میں اوپیک کی طرف سے مقرر کردہ تیل کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے تیزی سے بڑھتی ہوئی افراط زر دیکھی گئی۔

2000 کی دہائی میں، تیزی سے بڑھتی ہوئی افراط زر کا سامنا کرنے والے ممالک کی تعداد میں نمایاں کمی واقع ہوئی۔ اس طرح کے مواقع کی سب سے زیادہ شرح 2004-2005 میں انگولا میں دیکھی گئی تھی جس کی شرح 23٪ تھی۔

ہائپر انفلیشن

افراط زر اس وقت ہوتا ہے جب قیمتیں ماہانہ 50٪ سے زیادہ کی شرح سے بڑھتی ہیں۔ یہ کبھی کبھار دیکھنے میں آتی ہے۔ درحقیقت، ایسی افراط زر کی زیادہ تر مثالیں اس وقت دیکھنے میں آتی ہیں جب حکومتیں جنگی اخراجات کی ادائیگی کے رقم چھاپتی ہیں۔ ہائپر انفلیشن کی مثالوں میں 1920 کی دہائی میں جرمنی، 2000 کی دہائی میں زمبابوے اور 2010 کی دہائی میں وینزویلا شامل ہیں۔ ماریکہ میں، خانہ جنگی کے دوران ہائپر انفلیکشن یعنی اضافی افراط زر وقوع پزیر ہوئی۔

ڈس انفلیشن بمقابلہ ڈیفلیشن

تعریف سامان اور خدمات کی عمومی قیمت کی سطح میں کمی ہے۔ یہ قیمتوں کے گرنے کا عمل ہے، لہذا یہ افراط زر کے برعکس ہے۔ افراط زر میں کمی کی وجہ سے قوت خرید میں اضافہ ہوتا ہے۔ دوسرے لفظوں میں، آپ کے پاس اتنی ہی رقم ہوسکتی ہے، لیکن چونکہ قیمتیں کم ہیں، آپ کا ڈالر مزید خریداری کر سکتا ہے۔ افراط زر میں کمی کی سب سے واضح مثال امریکہ کا گریٹ ڈپریشن ہے۔

افراط زر میں کمی جی ڈی پی کے لیے کافی نقصان دہ بھی ہوسکتی ہے کیونکہ لوگ اشیا نہیں خریدتے کیونکہ وہ قیمتوں میں کمی کا انتظار کرتے ہیں۔ یہی ہے کہ مرکزی بینک نہ صرف افراط زر کی مخالفت کرتے ہیں، بلکہ افراط زر میں زیادہ کمی کی بھی مخالفت کرتے ہیں۔

یہ ڈس انفلیشن سے مختلف ہے، جو کہ وقت کے ساتھ ساتھ کسی ملک کی مجموعی گھریلو پیداوار میں افراط زر (اور اس میں تبدیلی کی رفتار عام طور پر نشان زد ہوتی ہے) کی شرح میں صرف کمی ہے۔ ڈس انفلیشن اس وقت ہوتی ہے جب صارف کی قیمت کی سطح میں اضافہ پچھلی مدت سے کم ہو جاتی ہے جب قیمتیں بڑھ رہی تھیں۔

سٹیگفلیشن یعنی جمود

سٹیگفلیشن جمود اور افراط زر کا مجموعہ ہے۔ یہ وہ لمحہ ہے جب مہنگائی اب بھی ہے، لیکن اقتصادی ترقی جمود کا شکار ہے۔ یہ کیسے ممکن ہو سکتا ہے؟ اگر معاشی ترقی کیلئے زیادہ اقدامات کی ضرورت نہیں ہے تو قیمتیں کیوں بڑھتی ہیں؟

یہ رجحان 1970 کی دہائی میں اس وقت پیش آیا جب امریکہ نے سونے کے معیار کو ترک کر دیا۔ ایک بار جب ڈالر کی قیمت نے سونے پر انحصار ختم کیا تو یہ گراوٹ کا شکار ہوا۔ اسی دوران سونے کی قیمتیں آسمان کو چھونے لگیں۔ اس وقت فیڈرل ریزرو کے چیئرمین پال وولکر نے فیڈ فنڈز کی شرح کو دوہرے ہندسوں تک بڑھا کر اس جمود کو ختم کیا۔ مزید افراط زر کے زور کو ختم کرنے کیلئے اس نے اسے کافی دیر تک اسے وہاں رکھا۔

ویج انفلیشن یعنی اجرت کی افراط زر

ویج انفلیشن برائے نام اجرتوں میں اضافہ کی شرح ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ کارکنوں کو زیادہ تنخواہ ملتی ہے۔ بلاشبہ، ہر کوئی یہ سمجھتا ہے کہ وہ اپنی اجرت میں اضافے کا حقدار ہے، لیکن زیادہ اجرت مہنگائی کو بڑھانے کا بھی ایک عنصر ہے۔ اس سے کمپنی کے سامان اور خدمات کی قیمتوں میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

انڈر لائن انفلیشن

افراط زر کی ایک بنیادی (یا بنیادی) شرح معیشت میں افراط زر کے دباؤ کی پیمائش کرتی ہے جو بنیادی طور پر مارکیٹ کی قوتوں کی وجہ سے ہوتے ہیں، یعنی قیمتوں میں تبدیلی جو معیشت میں صرف طلب اور رسد کے حالات کی عکاسی کرتی ہے۔

اس قسم کی افراط زر آخر کار بڑھے گی اگر معاشی استحکام، سپلائی شاک، قیمتوں میں زیادہ تبدیلی یا دیگر غیر متوقع رکاوٹیں نہ ہوں۔

بنیادی لمحات

کور انفلیشن یعنی بنیادی افراط زر

کور انفلیشن کی شرح خوراک اور توانائی کے علاوہ ہر چیز کی بڑھتی ہوئی قیمتوں کی پیمائش کرتی ہے کیونکہ سیزن کی وجہ سے ان کی قیمتیں انتہائی تبدیل ہوتی ہیں۔ یہ اخراج بنیادی افراط زر کے رجحانات کی پیمائش کرنے کے لیے بنیادی شرح مہنگائی کی شرح کیلئے زیادہ درست اعدادو شمار پیش کرتا ہے، اسی لیے مرکزی بینک مالیاتی پالیسی ترتیب دیتے وقت بنیادی افراط زر کی شرح کو استعمال کرنے کو ترجیح دیتے ہیں۔ وہ اسے طویل مدتی افراط زر کے رجحانات کے اہم اشارے کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ اس کے باوجود، اگر ایندھن کی قیمت ایک طویل عرصے سے بڑھ رہی ہے، تو یہ قیمت کی توقعات کو بڑھا کر بنیادی افراط زر کو متاثر کر سکتی ہے۔

کور سی پی آئی بمقابلہ کور سی پی ای

بنیادی افراط زر کی پیمائش کور کنزیومر پرائس انڈیکس (CPI) اور بنیادی ذاتی کھپت کے اخراجات کے اشاریے (PCE) دونوں سے کی جاتی ہے۔ CPI گھریلو سامان اور خدمات کی قیمتوں کی پیمائش کرتا ہے۔ PCE صارفین کی طرف سے خریدی گئی اشیاء اور خدمات کی قیمتوں کی نمائندگی کرتا ہے۔ لہذا، اگر یہ کور یعنی بنیادی ہیں تو اس کا مطلب ہے خوراک اور توانائی کے علاوہ۔ کور PCE اور CPI دو بھائیوں کی طرح ہیں۔ یہ دونوں اس بات کا تعین کرنے میں مدد کرتے ہیں کہ معیشت میں افراط زر کتنی ہے۔

افراط زر کا حساب

لہذا، اب جب ہم افراط زر کی تمام تعریفوں کے ارد گرد بات کر رہے ہیں، آئیے دیکھتے ہیں کہ ہم اس کی پیمائش اور تجزیہ کیسے کر سکتے ہیں۔

مہنگائی کی پیمائش کیسے کی جائے۔

افراط زر کی شرح افراط زر کی شرح سے ماپا جاتا ہے، ایک سال سے دوسرے سال میں قیمتوں میں فیصد کی تبدیلی۔ افراط زر کی شرح کو چند مختلف طریقوں سے ماپا جا سکتا ہے:

  1. کنزیومر پرائس انڈیکس (CPI) گھریلو سروے کی بنیاد پر، سامان کی ایک مخصوص ٹوکری کا استعمال کرتے ہوئے ایک مخصوص مدت کے دوران صارفین کی جانب سے خریدے گئے سامان اور خدمات کی کل لاگت کی پیمائش کرتا ہے۔ لہذا، اس ٹوکری کی قیمت میں اضافہ افراط زر کی نشاندہی کرتا ہے۔ ایک ٹوکری میں مختلف گروپس شامل ہوتے ہیں جیسے خوراک اور مشروبات، طبی دیکھ بھال، نقل و حمل وغیرہ۔
  2. دوسری طرف، پروڈیوسر پرائس انڈیکس (PPI) پروڈیوسر کے نقطہ نظر سے افراط زر کی پیمائش کرتا ہے۔ پی پی آئی اوسط قیمتوں کا ایک پیمانہ ہے جو پروڈیوسر مقامی طور پر تیار کردہ سامان اور خدمات کے لیے وصول کرتے ہیں۔ اس کا حساب فروخت کنندگان کو سامان کی نمائندہ ٹوکری کے لیے موصول ہونے والی موجودہ قیمتوں کو ایک مخصوص بنیادی سال میں ان کی قیمتوں سے تقسیم کرکے، پھر نتیجہ کو 100 سے ضرب دے کر لگایا جاتا ہے۔
  3. تیسرا عام انڈیکس ذاتی کھپت کے اخراجات (PCE) ہے۔ پی سی ای گھریلو سامان اور خدمات کی قیمتوں میں تبدیلیوں کو پروڈیوسرز کے جی ڈی پی ڈیٹا کی بنیاد پر ماپتا ہے۔ یہ CPI سے کم مخصوص ہے کیونکہ یہ CPI میں استعمال ہونے والے قیمتوں کے تخمینے پر مبنی ہے، لیکن اس میں دیگر ذرائع سے بھی تخمینہ شامل ہے۔ دوسرے دونوں انڈیکس کی طرح، انڈیکس میں ایک سال سے دوسرے سال تک اضافہ افراط زر کی نشاندہی کرتا ہے۔

ٹریڈرز کو مہنگائی یعنی افراط زر کے بارے میں کیوں جاننا چاہیے۔

CPI کا اجراء (جسے آپ اقتصادی کیلنڈر میں دیکھ سکتے ہیں) ٹریڈرز میں بہت مقبول ہے کیونکہ افراط زر، مرکزی بینکوں اور کرنسی کے درمیان براہ راست تعلق ہے۔ زیادہ تر ترقی یافتہ ممالک افراط زر کی شرح کو 2٪ پر رکھنے کی کوشش کرتے ہیں۔

جب افراط زر زیادہ ہوتا ہے تو مرکزی بینک شرح سود بڑھا دیتا ہے۔ نتیجے کے طور پر، کرنسی کی مانگ بڑھتی ہے، کیونکہ زیادہ شرح سود غیر ملکی سرمایہ کاروں کو راغب کرتی ہے۔ اس لیے زر مبادلہ کی شرح بڑھ جاتی ہے۔ اور اس کے برعکس: جب افراط زر بہت کم ہو تو، مرکزی بینک شرح سود کو کم کر سکتا ہے، کرنسی کی مانگ زیادہ تر کم ہو جائے گی، اس لیے شرح مبادلہ گر جاتا ہے۔

یہ تمام کرنسیوں کو متاثر کرتا ہے، لیکن خاص طور پر USD، کیونکہ اس وقت، امریکہ 7.5٪ کی افراط زر کیساتھ کافی جدوجہد کر رہا ہے۔

آئیے مثال کو دیکھتے ہیں:

بروز 10 نومبر 2021 کو، امریکی بیورو آف لیبر اسٹیٹسٹکس کی ریلیز 2021 میں 0.9٪ کی سب سے زیادہ CPI کی شرحوں میں سے ایک تھی۔ اشاعت کے کچھ لمحوں کے بعد، USD دیگر کرنسیوں کے مقابلے میں مضبوط ہوا، مثال کے طور پر، USD/CAD میں 2060 پوائنٹس کا اضافہ ہوا:

1.png

جب افراط زر گر رہا ہے تو، ٹریڈر شرط لگائیں گے کہ فیڈرل ریزرو غور کرے گا، اسٹاک اور بانڈ کی قیمتوں کو اٹھانے میں مدد کرے گا۔ اس کے برعکس، اگر افراط زر بڑھ رہا ہے، تو ٹریڈر اکثر یہ مانیں گے کہ مشکل اثاثے جیسے کہ اشیاء کی قدر میں اضافہ ہو گا کیونکہ فیڈ کم موافق نظر آتا ہے۔

ٹریڈر باقاعدگی سے نگرانی کرتے ہیں کہ آیا جاری ہونے والی CPI رپورٹ توقع سے زیادہ مضبوط ہے یا کمزور۔ چونکہ ایک لمحہ سسپنس ہے، یہ ٹریڈنگ کا ایک بہترین موقع ہے کیونکہ، کسی بھی صورت میں، ریلیز کا نتیجہ اتار چڑھاؤ کو ہوا دیتا ہے جو تجارتی حکمت عملیوں کے لیے بے شمار مواقع فراہم کرتا ہے۔

خلاصہ یہ کہ ہر قسم کی افراط زر بری نہیں ہوتی ہے۔ مزید برآں، یہ CPI، PPI، اور CPE رپورٹس کی ریلیز پر مارکیٹ کی تبدیلیوں پر ٹریڈنگ کرنے کا ایک شاندار موقع فراہم کرتی ہے۔

اسی طرح

ٹریڈنگ میں ٹک والیوم انڈیکیٹرز کا استعمال کیسے کریں؟
ٹریڈنگ میں ٹک والیوم انڈیکیٹرز کا استعمال کیسے کریں؟

اگر آپ سٹاکس ٹریڈ کرتے ہیں تو، آپ کے پاس ٹریڈنگ حجم کے حوالے سے معلومات ہو سکتی ہے جو کہ سٹاک ایکسچینج فراہم کرتا ہے. یہ معلومات آپ کو اجازت دیتی ہے کہ آپ دیکھیں کہ آیا کہ مارکیٹ پلئیرز قیمتوں کا رجحان بیک اپ کرتے ہیں یا نہیں. کرنسی مارکیٹ میں صورتحال مختلف ہے اور ٹریڈرز حجم سے اندرونی بصیرت حاصل کرتے ہیں۔

بلا جھجھک سوال پوچھیں

  • FBS کی جانب سے کمائی گئی رقم کیسے وڈرا کر سکتے ہیں؟

    طریقہ کار بہت سیدھا ہے۔ ویب سائٹ پر وڈرا کے صفحے یا FBS پرسنل ایریا کے فنانشل سیکشن پر جائیں اور وڈرا تک رسائی حاصل کریں۔ آپ کمائی ہوئی رقم اسی ادائیگی کے نظام کے ذریعہ حاصل کرسکتے ہیں جو آپ نے ڈپازٹ کرنے کے لئے استعمال کیا تھا۔ اگر آپ نے مختلف طریقوں کے ذریعہ اکاؤنٹ کو مالی اعانت فراہم کی ہے تو، جمع شدہ رقوم کے حساب سے تناسب میں اسی طریقوں کے ذریعہ اپنا منافع واپس لیں۔

  • FBS اکاؤنٹ کو کیسے کھولا جائے؟

    ہماری ویب سائٹ پر ‘اکاؤنٹ کھولیں’ کے بٹن پر کلک کریں اور پرسنل ایریا میں جائیں۔ تجارت شروع کرنے سے پہلے، ایک پروفائل کی تصدیق کروائیں۔ اپنے ای میل اور فون نمبر کی بھی تصدیق کروائیں، اپنی شناختی تصدیق کروائیں۔ یہ طریقہ کار آپ کے فنڈز اور شناخت کی حفاظت کی ضمانت دیتا ہے۔ ایک بار جب آپ تمام جانچ پڑتال کرلیں تو، ترجیحی ٹریڈنگ پلیٹ فارم پر جائیں اور ٹریڈنگ شروع کریں۔

  • ٹریڈنگ کیسے شروع کی جائے؟

    اگر آپ +18 سے زائد کی عمر رکھتے ہیں، تو آپ FBS میں شامل ہوسکتے ہیں اور اپنے FX سفر کا آغاز کر سکتے ہیں۔ ٹریڈںگ کرنے کے لئے، آپ کو ایک بروکریج اکاؤنٹ اور مالیاتی منڈیوں میں اثاثوں کے برتاؤ کے بارے میں مناسب علم کی ضرورت ہے۔ ہمارے مفت تعلیمی مواد اور ایک FBS اکاؤنٹ بنانے کے ساتھ بنیادی باتوں کا مطالعہ بھی شروع کریں۔ آپ ڈیمو اکاؤنٹ کے ذریعہ ورچوئل پیسہ سے اس پورے ماحول کی جانچ پڑتال بھی کرسکتے ہیں۔ ایک بار جب آپ تیار ہوجائیں تو، حقیقی مارکیٹ میں داخل ہوں اور کامیابی کے لئے ٹریڈںگ یعنی تجارت شروع کریں۔

  • لیول اپ بونس کو کیسے فعال کیا جائے؟

    اپنے FBS پرسنل ایریا کے ویب یا موبائل ورژن میں لیول اپ بونس اکاؤنٹ کھولیں اور اپنے اکاؤنٹ میں 140$ تک مفت حاصل کریں۔

ڈپوزٹ کریں اپنے لوکل طریقوں سے۔

ٹیم اسپرٹ کو محسوس کریں

ڈیٹا جمع کرنے کا نوٹس

ایف بی ایس اس ویب سائٹ کو چلانے کے لئے آپ کا ریکارڈ ترتیب دیتا ہے۔ "قبول" کا بٹن دبانے سے آپ ہماری پرائویسی پالیسی پر اتفاق کرتے ہیں۔

دوبارہ کال کریں

ایک مینجر جلد ہی آپکو کال کرے گا

نمبر تبدیل کریں

آپ کی درخواست موصول ہو گئ ہے

ایک مینجر جلد ہی آپکو کال کرے گا

اس فون نمبر کیلئے اگلی کال بیک کی درخواست
۔ میں دستیاب ہوگی

اگر آپ کو کوئی فوری مسئلہ درپیش ہے تو براہ کرم ہم سے رابطہ کریں
لائیو چیٹ کے ذریعے

اندروانی مسئلہ ،تھوڑی دیر بعد کوشش کریں

اپنا وقت ضائع نہ کریں – اس بات پر نظر رکھیں کہ NFP امریکی ڈالر اور منافع کو کس طرح متاثر کرسکتا ہے!

ابتدائی فوریکس گائیڈ بک

فاریکس پر نئے آنے والوں کیلئے یہ کتاب ٹریڈنگ کی دنیا کے بارے میں رہنمائی کرتی ہے۔

ابتدائی فوریکس گائیڈ بک

ٹریڈنگ شروع کرنے کے لئے سب سے اہم چیزیں
اپنا ای میل لکھیں اور ہم آپ کو مفت ابتدائی فوریکس گائیڈ بک بھیجیں گے

شکریہ آپکا ای میل موصول ہو چکا ہے

ہم نے آپ کے ای میل پر ایک خصوصی لنک ای میل کیا ہے۔
لنک پر کلک کریں اور اپنی فوریکس گائیڈ بک وصول کریں۔

آپ اپنے براؤزر کے پرانا ورژن کا استعمال کر رہے ہیں.

اپ ڈیٹ کریں اور محفوظ، مزید آرام دہ، پرسکون اور پیداواری ٹریڈنگ کے تجربے کے لئے ایک کوشش کریں.

Safari Chrome Firefox Opera