ڈائمنڈ چارٹ پیٹرنز ٹریڈنگ کیسے کی جائے

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرنز ٹریڈنگ کیسے کی جائے

2022-11-22 • اپ ڈیڈ

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کیا ہے؟

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن ایک تکنیکی تجزیاتی پیٹرن ہے جسے عام طور پر رجحان کے الٹ جانے کا پتہ لگانے کیلئے استعمال کیا جاتا ہے۔ یہ ایک نایاب پیٹرن ہے۔ یہ اس وقت ہوتا ہے جب قیمت مستحکم اپ ٹرینڈ یا نیچے کے رجحان کے بعد چپٹی ہونا شروع ہو جاتی ہے، جو چارٹ پر ڈائمنڈ جیسی شکل چھوڑ دیتی ہے۔

اس مضمون میں، آپ کو درج ذیل سوالات کے جوابات ملیں گے۔ 

  • ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کیا ہیں؟ 
  • یہ کب بنتے ہیں؟
  • بلش اور بیئرش ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن میں کیا فرق ہے؟
  • آپ اپنی تجارتی حکمت عملی میں ڈائمنڈ چارٹس کو کیسے شامل کرسکتے ہیں؟

ٹریڈنگ میں ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن

ڈائمنڈ کی تشکیل ایک کلاسک چارٹ پیٹرن ہے۔ تاہم، یہ فلیگز، ہیڈ اینڈ شولڈر، یا ریکٹینگل پیٹرن کی طرح اکثر طور پر ظاہر نہیں ہوتے ہیں۔ ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کیساتھ ٹریڈنگ کیلئے بہت زیادہ مواقع نہیں ہیں۔ تاہم، تکنیکی سمجھ بوجھ والے ٹریڈرز کو اس پیٹرن سے واقفیت رکھنا چاہیے کیونکہ یہ ایک اچھا تجارتی موقع فراہم کرتا ہے اگر اسے کافی جلد پہچان لیا جائے۔

ڈائمنڈ پیٹرن اکثر ایک توسیعی رجحان کے مرحلے کے بعد واقع ہوتا ہے۔ بلش مارکیٹ کے دوران، پیٹرن کو ڈائمنڈ ٹاپ یا بیئرش ڈائمنڈ پیٹرن کہا جاتا ہے کیونکہ قیمت پلٹ جاتی ہے اور اس پیٹرن کے بعد نیچے کی طرف حرکت شروع کردیتی ہے۔ اس کے برعکس، پیٹرن کو ڈائمنڈ باٹم یا بلش ڈائمنڈ پیٹرن کہا جاتا ہے کیونکہ اس کے بلش یعنی تیزی کی وجہ سے جب ڈائمنڈ بئیرمارکیٹ میں واقع ہوتا ہے۔

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن بہت نایاب ہے کیونکہ اسے بننے میں کافی وقت لگ سکتا ہے۔ سب سے پہلے، اسے سپورٹ اور مزاحمتی لکیریں بنانی چاہئیں، تقریباً مضبوط زاویوں سے افقی لکیروں کی طرف موڑتے ہوئے، پھر ایک ڈھانچے میں دوبارہ تبدیل ہونا چاہیے۔ نتیجے کیطور پر ایک ڈائمنڈ کی شکل کا بننا ہے۔ اسی کی وجہ سے اس کا نام ڈائمنڈ ماخوذ کیا گیا۔

نیچے دیا گیا چارٹ بروز 7 جون 2019 کو GBPUSD پر بننے والے ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کو دکھاتا ہے۔

gbpusd june 2019.png

حقیقت میں، پیٹرن اتنے صاف اور یہاں تک کہ ڈرائنگ یعنی خاکوں میں بھی نہیں ہیں۔ لیکن اگر پیٹرن اونچی اور نیچی دونوں سطحوں کی تشکل کرتا ہے اور اس کی کم و بیش رومبس یعنی چکور نما شکل ہے تو یہ ڈائمنڈ ہے۔

بیئرش ڈائمنڈ پیٹرن

بیئرش ڈآئمنڈ کی ایک قسم، جسے ڈائمنڈ ٹاپ بھی کہا جاتا ہے، جسے پچھلے سیکشن میں بیان کیا گیا تھا۔ ٹریڈر اس پیٹرن کو اوپر اور نیچے کی قیمت کے جھولوں کی ایک سیریز کے طور پر دیکھ سکتے ہیں جو ہیڈ اینڈ شولڈر کے پیٹرن کے ڈھانچے سے مشابہ ہے۔

خاص طور پر، بایاں کندھا اور سر ایک ٹرینڈ لائن بنانے کیلئے آپس میں مل جاتے ہیں، جب کہ سر اور دایاں کندھا ایک دوسری ٹرینڈ لائن بنائیں گے۔ یہ بیئرش ڈائمنڈ فارمیشن کے اوپری حصے کیلئے ٹرینڈ لائنز کو مکمل کرتا ہے۔ پھر، نچلے حصے کیلئے، ہم چلتی قیمت میں کم سطحوں والیوں کو جوڑیں گے، جو ایک V-شکل بنائیں گی۔

2.png

اوپر کی مثال ہمیں دوبارہ بیئرش ڈائمنڈ پیٹرن دکھاتی ہے۔ یہ چارٹ ڈائمنڈ کے ڈھانچے کی ٹریڈنگ کیلئے بریک آؤٹ انٹری سگنل اور پیٹرن کیلئے ہدف کی سطح دکھاتا ہے۔ مختصر اندراجی سگنل بریک آؤٹ سے فعال ہو جائے گا اور اوپر کی طرف نچلی دائیں لائن کے نیچے بند ہو جائے گا۔

کچھ ٹریڈر صرف اس لائن کے نیچے وقفے کا انتظار کرنے کو ترجیح دیتے ہیں ناکہ اس کے نیچے بند کرنے کی ضرورت کے بغیر۔ یہ داخلے کا ایک ممکنہ نقطہ بھی ہے; تاہم، آگاہ رہیں کہ اس کے نتیجے میں بریک آؤٹ اور بند ہونے کا انتظار کرنے سے زیادہ غلط سگنل بھی ہوسکتے ہیں۔

ساخت کیلئے ہدف کی قیمت کی پیمائش کو، پیمائش کی تحریک کا طریقہ کار استعمال کرتے ہوئے شمار کیا جاتا ہے۔ خاص طور پر، ہم کسی ڈھانچے کے اندر چوٹی سے گرت تک کے فاصلے کی پیمائش کرنا چاہتے ہیں اور پھر اس فاصلے کو بریک آؤٹ پوائنٹ سے نیچے پروجیکٹ کرنا چاہتے ہیں۔ یہ ایک ایسی سطح فراہم کرے گا جہاں ہم توقع کر سکتے ہیں کہ بریک آؤٹ کا تسلسل ختم ہونا شروع ہو جائے گا یا ممکنہ طور پر ریورس ہو جائے گا۔ اس طرح، یہ ایک بہترین ٹیک پرافٹ اور ایگزٹ لیول کی نمائندگی کرتا ہے۔

بلش ڈائمنڈ پیٹرن

آئیے اب بیئرش ڈائمنڈ کے مخالف کو دیکھتے ہیں جو کہ ایک تیزی والا ڈائمنڈ ہے۔ ایک بلش ڈائمنڈ کا نمونہ، جسے ڈائمنڈ باٹم کہا جاتا ہے، نیچے کے رجحان کے بعد واقع ہوتا ہے۔ ہم عام طور پر ایک مناسب قیمت نیچے جاتے ہوئے دیکھتے ہیں اور پھر ایک مضبوطی کا مرحلہ جو ڈائمنڈ کے نیچے کے اوپر اور نیچے سوئنگ پوائنٹس کو تراشتا ہوا نکلتا ہے۔

اس صورت میں، اس کی شکل ایک الٹے سر اور کندھوں کے پیٹرن سے ملتی ہے۔ ہم ساخت کے اندر چوٹیوں اور گرتوں کو اسی طرح جوڑیں گے جیسا کہ پہلے بیان کیا گیا ہے۔ ایک بار جب ہم ڈھانچے کے گرد چار ٹرینڈ لائنیں کھینچ لیتے ہیں اور اس بات کی تصدیق کر لیتے ہیں کہ چاروں لائنیں سائز میں تقریباً برابر ہیں، تو ہم اس ساخت کی تصدیق کر سکتے ہیں کہ یہ بُلش ڈائمنڈ پیٹرن ہے۔

Group 2.png

اوپر ڈائمنڈ کے نچلے حصے کی شکل کو دیکھتے ہوئے، ہم دیکھتے ہیں کہ قیمت میں کمی کا عمل اسی تشکیل کو جاری رکھے ہوئے ہے۔ ڈائمنڈ کے ڈھانچے میں ایک چڑھتے ہوئے تسلسل کو نیچے کی طرف اشارہ کرنے والی دو اوپری ٹرینڈ لائنوں اور اوپر کی طرف اشارہ کرنے والی دو نچلی ٹرینڈ لائنوں کے ذریعے خاکہ پیش کیا جاتا ہے۔

نیچے کی ڈھلوان کیساتھ اوپری دائیں لائن کے اوپر ایک بریک اور بند ہونا ایک طویل پوزیشن کھولنے کا سگنل دیتی ہے۔ ایک بار پھر، ترجیحی طریقہ یہ ہوگا کہ حقیقی بریک آؤٹ اور بند ہونے کا انتظار کیا جائے اور اس ٹرینڈ لائن کے اوپر صرف بریک آؤٹ کے بجائے اس علاقے کے ارد گرد غلط سگنلز اور قیمتوں کی ممکنہ نقل و حرکت کو روکا جائے۔

بند ڈھانچے کے اندر زیادہ اور کم کی پیمائش کرکے اوپری قیمت کے ہدف کا حساب لگانا مناسب ہے۔ ایک بار جب ہم اس فاصلے کا حساب لگائیں گے اور اسے چارٹ پر پلاٹ کریں گے، تو ہم اپنے ترجیحی ہدف کی سطح تک پہنچنے کیلئے اوپر کی طرف متوقع بریک آؤٹ پوائنٹ سے اسی فاصلے کو بڑھا دیں گے۔ ایک بار جب قیمت اس سطح تک پہنچ جاتی ہے، تو ہمیں پوری پوزیشن، یا کم از کم اس کے ایک بڑے حصے کو بند کرنے پر غور کرنا چاہیے، اور اگر ضروری ہو تو ممکنہ طور پر چھوٹے حصے کو کھلا چھوڑ دینا چاہیے۔

ڈائمنڈ کونٹینیوایشن پیٹرن کیا ہے؟

اگرچہ ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کو بڑے پیمانے پر ریورسل سمجھا جاتا ہے، یہ ٹریڈرز کو حیران کر سکتے ہیں۔ تمام ڈائمنڈ کے نمونے رجحان کی سمت کو تبدیل نہیں کرتے ہیں، لہذا یہ یاد رکھنا ضروری ہے کہ ڈائمنڈ کے تسلسل کے نمونے بھی موجود ہیں۔

ڈائمنڈ کے تسلسل کا نمونہ اس وقت ہوتا ہے جب قیمت بنیادی رجحان کی سمت میں استحکام کی مدت سے نکل جاتی ہے۔ ریورسل ڈائمنڈ کے نمونوں کی طرح، قیمت اونچی اور نچلی چوٹیوں کو تخلیق کرتی ہے لیکن پھر اپنی حدود کو کم کر دیتی ہے اور، تھوڑی دیر کے بعد، مرکزی رجحان کی طرح واپس ٹریک پر چلی جاتی ہیں۔

Diamond continuation pattern.png

ڈائمنڈ کے تسلسل کے پیٹرن کو تیار کرنے اور شکل اختیار کرنے میں بھی کافی وقت لگتا ہے، اس لیے آپ کے پاس یہ دیکھنے کیلئے دوسرے طریقے اور ٹولز استعمال کرنے کیلئے کافی وقت ہے کہ آیا رجحان کے الٹ جانے کا امکان ہے یا قیمت اسی سمت جاری رہے گی۔

ڈائمنڈ پیٹرن کے نقصانات

بدقسمتی سے، کوئی بھی پیٹرن 100٪ درستگی کیساتھ مارکیٹ کی قیمت کی نقل و حرکت کی پیشنگوئی نہیں کر سکتا ہے۔ ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن ہمیشہ رجحان کے الٹ جانے کی پیشنگوئی نہیں کرتے ہیں۔ کبھی کبھی، قیمت ٹوٹ سکتی ہے اور پہلے کی طرح اسی سمت میں آگے بڑھ سکتی ہے۔ اس لیے یہ ضروری ہے کہ ریورسل تصدیق کا انتظار کریں یا رفتار کے بارے میں مزید بصیرت حاصل کرنے کیلئے دوسرے طریقے استعمال کریں۔

مثال کیطور پر، اس طرح کے معاملات میں اکثر استعمال ہونے والے ٹولز میں سے ایک پرائس اوسیلیٹر بھی ہے۔ یہ دکھا سکتا ہے کہ آیا تجارتی اثاثہ ضرورت سے زیادہ فروخت ہوا ہے یا خریدا گیا ہے۔ دوسرا طریقہ یہ ہے کہ موونگ ایوریج انڈیکیٹر اور ریلیٹیو اسٹرینتھ انڈیکس استعمال کریں۔ ان ٹولز کو ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن والے چارٹ پر لاگو کرنے سے آپ کو قیمت کی حرکت کی سمت کو مزید سمجھنے اور سپورٹ یا مزاحمت کے ممکنہ وقفے کو دیکھنے میں مدد مل سکتی ہے۔

ڈائمنڈ پیٹرن سے منافع کیسے بنایا جاسکتا ہے

جب آپ ڈائمنڈ پیٹرن کو اپنے فائدے کیلئے استعمال کرنے کیلئے تیار ہوںگے، تو آپ شاید سوچنے لگیں گے کہ آپ اسے کیسے استعمال کر سکتے ہیں۔ پہلی چیز جو آپ کو یاد رکھنے کی ضرورت ہے وہ یہ ہے کہ اس پیٹرن سے آپ جس کم از کم قیمت کی توقع کر سکتے ہیں وہ فارمیشن سائز کے برابر ہے۔ لہذا یہ جاننے کے لیے کہ آپ اپنی پوزیشن کب بند کر سکتے ہیں اور منافع لے سکتے ہیں، تو آپ کو ایسا کرنے کی ضرورت ہے:

  1. پیٹرن کے مطلق زیادہ اور مطلق کم کے درمیان فاصلے کی پیمائش کریں;
  2. نیچے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے پیٹرن کے کنارے پر ایک ہی لمبائی کی ایک لائن پلاٹ کریں (ڈائمنڈ کی اونچائی کے بعد) یا اوپر کی طرف (ڈائمنڈ کی نچلی سطح کے بعد);
  3. لائن کے اختتام کو نشان زد کریں - یہ وہ جگہ ہے جہاں کم سے کم ہدف ہوگا۔

ایک بار جب قیمت اس سطح کو توڑ دیتی ہے، آپ ٹریڈ سے باہر نکل سکتے ہیں۔ آپ تھوڑا انتظار بھی کر سکتے ہیں کیونکہ یہ لائن قیمت کی منتقلی کا اختتام نہیں ہو سکتی، اور یہ چیک کرنے کیلئے کہ آیا کوئی ممکنہ اخراج پوائنٹس موجود ہیں، دوسرے طریقے (جیسے حجم کے حساب سے موونگ ایوریج) استعمال کریں۔

gbpusd minimum target.png

ڈائمنڈ پیٹرن ٹریڈنگ کی حکمت عملی

آئیے اب ڈائمنڈ پیٹرن کیساتھ تجارتی حکمت عملی بنانے پر توجہ مرکوز کرتے ہیں۔ ہم نے دیکھا ہے کہ ڈائمنڈ کی تکنیکی تشکیل اوپری رجحان اور نیچے کے رجحان دونوں کے تناظر میں ہوتی ہے۔ جب تیزی کی قیمت کا عمل ڈائمنڈ کے پیٹرن سے پہلے ہوتا ہے، تو اسے بیئرش اوور ٹونز کیساتھ ڈائمنڈ ٹاپ کہا جاتا ہے۔ جب ڈائمنڈ کا پیٹرن بیئرش قیمت کی حرکت سے پہلے واقع ہوتا ہے، تو اسے ڈائمنڈ باٹم کہا جاتا ہے، جس میں بلش پوشیدہ ہوتا ہے۔

ہم جانتے ہیں کہ ڈائمنڈ کا نمونہ مارکیٹ میں زیادہ پھیلا ہوا نہیں ہے۔ اس طرح، ہم اس حکمت عملی میں بہت زیادہ متغیرات شامل نہیں کرنا چاہتے جو کسی دوسری صورت میں اچھے سیٹ اپ کو فلٹر کر سکیں۔ ہم ڈائمنڈ ٹریڈنگ کی اس حکمت عملی میں خالص پرائس ایکشن اپروچ کا استعمال کرتے ہوئے اسے ہر ممکن حد تک آسان رکھنے کی کوشش کریں گے۔

یہاں ڈائمنڈ ٹاپ چارٹ پیٹرن کی تجارت کے اصول ہیں:

  • ڈائمنڈ ٹاپ فارمیشن سے پہلے واضح اپ ٹرینڈ کا ہونا ضروری ہے۔
  • ڈائمنڈ ٹاپ فارمیشن کو چار ٹرینڈ لائنز کیساتھ واضح طور پر بیان کیا جانا چاہیے جو آپس میں جڑی ہوں اور لمبائی میں ایک دوسرے سے نسبتاً قریب ہوں۔
  • وقفے پر مارکیٹ میں فروخت کا آرڈر درج کریں اور پیٹرن کی تکمیل کے قریب اوپر کی طرف ڈھلوان پر ٹرینڈ لائن کے نیچے بند کریں۔
  • یہ بہتر ہے کہ اسٹاپ لاس کو بریک آؤٹ پوائنٹ سے پہلے کے سب سے حالیہ ہائی سونگ پر رکھیں۔
  • ٹارگٹ لیول کا حساب موومنٹ کے حساب کتاب کی بنیاد پر کیا جائے گا۔ ہم ڈھانچے کے اندر سب سے زیادہ اونچی اور سب سے نچلی سطح کے درمیان فاصلے کی پیمائش کریں گے اور اسے بریک آؤٹ پوائنٹ سے نیچے پیش کریں گے۔ پیشنگوئی کی یہ سطح منافع کے اخراج کے نقطہ کے طور پر کام کرے گی۔
  • ٹریڈنگ آرڈر میں ایک اضافی ٹائم اسٹاپ جزو بھی ہوگا۔ خاص طور پر، اگر 50 کینڈل اسٹک گزرنے کے بعد، قیمت نے ہمارے اسٹاپ لاس یا ہدف کی سطح کو متحرک نہیں کیا، تو ہم فوری طور پر ٹریڈ سے باہر نکل جاتے ہیں۔

usdcad top diamond.png

ڈائمنڈ باٹم چارٹ پیٹرن کیلئے تجارتی اصول بالکل برعکس ہیں:

  • ڈائمنڈ باٹم کے بننے سے پہلے واضح کمی کا رجحان ہونا چاہیے۔
  • ڈائمنڈ باٹم کی تشکیل کو چار ٹرینڈ لائنوں سے واضح طور پر بیان کیا جانا چاہئے جو آپس میں جڑے ہوئے ہیں اور لمبائی میں ایک دوسرے سے نسبتاً قریب ہیں۔
  • بریک آؤٹ کے بعد مارکیٹ میں خرید کا آرڈر درج کریں اور پیٹرن کی تکمیل کے قریب ڈاؤن ٹرینڈ لائن کے اوپر بند کریں۔
  • بریک آؤٹ پوائنٹ سے پہلے اسٹاپ لاس کو سب سے حالیہ سوئنگ لو پر رکھنا بہتر ہے۔
  • ٹارگٹ لیول کا حساب موومنٹ کے حساب کتاب کی بنیاد پر کیا جائے گا۔ ہم ساخت کے اندر سب سے زیادہ اونچی اور سب سے کم نچلی سطح کے درمیان فاصلے کی پیمائش کریں گے اور اسے بریک آؤٹ پوائنٹ سے اوپر کی طرف پروجیکٹ کریں گے۔ پیشنگوئی کی یہ سطح منافع کے اخراج کے نقطہ کے طور پر کام کرے گی۔
  • ٹریڈنگ آرڈر میں ایک اضافی ٹائم اسٹاپ جزو بھی ہوگا۔ خاص طور پر، اگر 50 کینڈل اسٹک گزرنے کے بعد، قیمت نے اسٹاپ لاس یا ہدف کی سطح کو متحرک نہیں کیا ہے، تو ہمیں فوری طور پر ٹریڈ سے باہر آ جانا چاہیے۔

usdcad bottom diamond.png

فاریکس ٹریڈنگ میں ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کا استعمال کیسے کریں۔

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن فاریکس ٹریڈنگ کیلئے ایک بہترین ٹول ہے۔ مزید یہ کہ، اسے فاریکس کی تجارتی حکمت عملیوں میں استعمال کرنا بھی آسان ہے۔ جب آپ اپنے چارٹ پر ڈائمنڈ کا نمونہ دیکھتے ہیں، تو آپ کو یہ کچھ کرنے کی ضرورت ہے۔

  1. مارکیٹ کا اندراج تلاش کریں۔ ڈائمنڈ پیٹرن تیزی اور مندی دونوں کے الٹ ہونے کی پیشنگوئی کر سکتے ہیں۔ اگر آپ کو بیئرش ڈائمنڈ نظر آتا ہے تو اسے پیٹرن کے نیچے کی سطح پر فروخت کریں۔ اور اگر آپ کو بلش ڈائمنڈ نظر آتا ہے تو اس وقت خریدیں جب قیمت اس سے زیادہ ہو۔
  2. اپنے اسٹاپ لاس کو مقرر کریں۔ اسٹاپ لاس آرڈرز آپ کو خطرات کا انتظام کرنے میں مدد کرتے ہیں اور خود بخود اپنی تجارت سے باہر نکل جاتے ہیں جب قیمت اس جگہ بدل جاتی ہے جہاں آپ نہیں جانا چاہتے۔ یہ ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کیلئے مفید ہے کیونکہ وہ بعض اوقات غلط سگنل دیتے ہیں۔ اس لیے بیئرش ڈائمنڈ کیلئے پیٹرن کے اوپر اسٹاپ لاس رکھیں۔ جہاں تک تیزی کے ڈائمنڈ کا تعلق ہے، ایک اسٹاپ لاس کو پیٹرن کے نیچے رکھا جانا چاہیے۔
  3. منافع کا ہدف مقرر کریں۔ جیسا کہ ہم نے پہلے ہی ذکر کیا ہے، منافع کا ہدف مقرر کرنا کافی آسان ہے۔ آپ کو پیٹرن کے کنارے پر ڈائمنڈ کی اونچائی کے برابر لائن بنانے کی ضرورت ہے۔ یہ کم سے کم قیمت کا ہدف ہوگا جہاں سے آپ ٹریڈنگ سے باہر نکل سکتے ہیں۔ 

ڈائمنڈ پیٹرن بمقابلہ ہیڈ اینڈ شولڈر پیٹرن

ٹریڈر اکثر ڈائمنڈ کے پیٹرن کو ہیڈ اینڈ شولڈر کے پیٹرن کیساتھ الجھا بیٹھتے ہیں کیونکہ ان کی شکلیں ایک جیسی ہوتی ہیں۔ لیکن کچھ خاص فرق ہیں جو آپ کو بتا سکتے ہیں کہ آپ واضع طورپر کس پیٹرن کیساتھ کام کر رہے ہیں۔

  • ایک ہیڈ اینڈ شولڈر کے پیٹرن میں ایک عین مطابق ڈھانچہ ہوتا ہے اور یہ تین چوٹیوں والی بیس لائن پر مشتمل ہوتا ہے۔ درمیانی چوٹی سب سے اونچی ہے، جب کہ دو باہر کی چوٹیاں اونچائی میں قریب ہیں۔ دوسری طرف، ڈائمنڈ پیٹرن میں کئی چوٹیاں اور گرتیں ہوسکتی ہیں اور اس کی ساخت ہیڈ اینڈ شولڈر کے پیٹرن سے کم ہوتی ہے۔
  • ہیڈ اینڈ شولڈرکے پیٹرن کی کم سطحیں ایک ہی لائنز پر واقع ہوتی ہیں اسے neckline کہا جاتا ہے۔ اگر قیمت neckline کو بریک کرتی ہے، تو یہ رجحان کے الٹ جانے کی نشاندہی کرتا ہے، اور یہ وقت ہے کہ ایک ٹریڈر تجارتی آرڈر میں داخل ہو۔ جہاں تک ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کا تعلق ہے، پیٹرن کی اونچی یا نیچی ایک ہی لائن سے تعلق نہیں رکھتی، لہذا ان کے ذریعے neckline کو کھینچنا ممکن نہیں ہوگا۔

ڈائمنڈ پیٹرن: فوائد اور نقصانات

جیسا کہ تمام پیٹرن کیساتھ، ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کے فوائد اور نقصانات دونوں ہیں۔

فوائد میں درج ذیل شامل ہیں:

  • کسی بھی لمبائی کے ٹائم فریم پر بننے کی صلاحیت؛
  • تیزی اور مندی دونوں حکمت عملیوں میں استعمال کرنے کی صلاحیت؛
  • ریورسل ٹریڈنگ کی حکمت عملیوں کیساتھ مطابقت۔

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کے نقصانات یہ ہیں:

  • پہچاننے اور تشریح کرنے میں دشواری؛
  • بہت کم ظاہر ہونا؛
  • کم وقت کے تائم فریموں پر کم کارکردگی دکھانا؛
  • غلط سگنل پیدا کرنے کی صلاحیت۔

لہذا یہاں تک کہ اگر آپ کو لگتا ہے کہ آپ کو اپنے چارٹ میں ایک ڈائمنڈ مل گیا ہے، تو فیصلہ کرنے میں جلدی نہ کریں۔ اس بات کا یقین کرنے کیلئے دیگر تکنیکی تجزیاتی ٹولز آزمائیں کہ ریورسل ہونے والا ہے، اور تب ہی فیصلہ کریں کہ آیا آپ کو اس پر عمل کرنا چاہیے یا نہیں۔

کیا ڈائمنڈ کے نمونے کرپٹو میں کام کرتے ہیں؟

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن فاریکس مارکیٹ میں سب سے زیادہ عام ہیں لیکن دیگر اثاثہ کلاسز پر بھی لاگو ہوسکتے ہیں۔ اس میں کرپٹو چارٹس بھی شامل ہیں۔ تاہم، کرپٹو دیگر اثاثوں کی اقسام سے مختلف ہیں۔ اس لیے کرپٹو کیلئے ڈائمنڈ چارٹ لگانے سے پہلے، یقینی بنائیں کہ آپ یہ سمجھتے ہیں کہ کرپٹو ٹریڈنگ کیسے کام کرتی ہے - یہ جان کر کہ کرپٹو مارکیٹ میں کیا صحیح ہے جو آپ کی تجارت کو بنا یا توڑ سکتی ہے۔

باٹم لائن

تمام مالیاتی منڈیوں میں ڈائمنڈ ریورسل پیٹرن دیکھے جاتے ہیں، بشمول اسٹاک مارکیٹ، فاریکس مارکیٹ، کرپٹو کرنسی مارکیٹ، اور فیوچر مارکیٹس۔ ڈائمنڈ پیٹرن اتنا عام نہیں ہے جتنا کہ دوسرے کلاسک چارٹ پیٹرن ہیں۔ تاہم، یہ بہت ضروری ہے کہ آپ پیٹرن کو سمجھیں اور اسے پہچانیں کیونکہ جب ایسا ہوتا ہے تو یہ ایک بہترین تجارتی موقع فراہم کر سکتا ہے۔

ایک دائمنڈ ٹاپ جو مارکیٹ کی قیمتوں میں اضافے کے بعد ہوتا ہے عام طور پر مارکیٹ کی قیمتوں میں کمی کے بعد ڈائمنڈ باٹم پیٹرن کے مقابلے میں تجارت کا زیادہ امکان فراہم کرتا ہے۔ آپ کو یہ دیکھنے کیلئے اپنی جانچ کرنی ہوگی کہ آیا یہ رجحان ان مارکیٹوں سے میل کھاتا ہے جن کی آپ تجارت کر رہے ہیں۔

اکثر پوچھے گئے سوالات

کیا میں کسی بھی ٹائم فریم میں ڈائمنڈ کے نمونوں کی تجارت کر سکتا ہوں؟

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن کسی بھی ٹائم فریم میں ہو سکتے ہیں، لہذا آپ تکنیکی طور پر ان کی تجارت کسی بھی ٹائم فریم میں کر سکتے ہیں۔ لیکن وہ سب سے زیادہ درست اور قابل بھروسہ ہوتے ہیں جب وہ طویل ٹائم فریم میں ہوتے ہیں کیونکہ چھوٹے ٹائم فریم ڈائمنڈ سے کم ٹائم فریم میں غلط سگنل دینے کا زیادہ امکان ہوتا ہے۔

کون سا زیادہ درست ہے: ڈائمنڈ ٹاپ یا ڈائمنڈ باٹم؟

اگرچہ ڈائمنڈ ٹاپ ڈائمنڈ باٹم سے زیادہ کثرت سے ظاہر ہوتی ہے، لیکن نہ ہی دوسرے سے زیادہ درست ہے۔ دونوں نمونوں کا استعمال ممکنہ رجحان کے ریورسل کو تلاش کرنے کیلئے کیا جاتا ہے۔ 

کیا ڈائمنڈ فارمیشن قابل اعتماد ریورسل انڈیکیٹر ہے؟

جی ہاں، ڈائمنڈ چارٹ کے نمونوں کو قابل اعتماد ریورسل انڈیکیٹر سمجھا جاتا ہے۔ تاہم، کوئی بھی انڈیکیٹر یا ٹول 100٪ درست نہیں ہوتا ہے، اس لیے دیگر اشاریوں اور طریقوں کا استعمال اس بات کو یقینی بنانے کیلئے ضروری ہے کہ قیمت کی حرکت الٹ جائے گی۔

ڈائمنڈ کا نمونہ کتنی بار کام کرتا ہے؟

ڈائمنڈ چارٹ پیٹرن سب سے زیادہ قابل اعتماد ریورسل اشاروں میں سے ہے۔ تاہم، انہیں تلاش کرنا آسان نہیں ہے، اس لیے ٹریڈرز کو انہیں استعمال کرنے کا موقع شاذ و نادر ہی ملتا ہے۔

اسی طرح

کپ اینڈ ہینڈل پیٹرن
کپ اینڈ ہینڈل پیٹرن

کپ اینڈ ہینڈل قیمت کے پیٹرن کا ایک تکنیکی چارٹ سیٹ اپ ہے جو کپ اور اس کے ہینڈل سے مشابہت رکھتا ہے۔

سب سے زیادہ مستحکم کرپٹو کرنسیاں
سب سے زیادہ مستحکم کرپٹو کرنسیاں

ویب سائٹ coinmarketcap.com کیمطابق، 9250 سے زیادہ مختلف کرپٹو کرنسیاں ہیں۔ اور وہ رجسٹرڈ ہیں، جن میں سے دو گنا سے زیادہ نظروں سے پوشیدہ ہیں۔ ان کی وضاحت کرنے والا مضمون پڑھنے میں بھی ایک سال لگ جائے گا اور اس کا کوئی مطلب نہیں ہوگا کیونکہ ان میں سے نصف کرپٹو کرنسیاں پہلے ہی غیر فعال ہوچکی ہیں۔

بلا جھجھک سوال پوچھیں

  • FBS کی جانب سے کمائی گئی رقم کیسے وڈرا کر سکتے ہیں؟

    طریقہ کار بہت سیدھا ہے۔ ویب سائٹ پر وڈرا کے صفحے یا FBS پرسنل ایریا کے فنانشل سیکشن پر جائیں اور وڈرا تک رسائی حاصل کریں۔ آپ کمائی ہوئی رقم اسی ادائیگی کے نظام کے ذریعہ حاصل کرسکتے ہیں جو آپ نے ڈپازٹ کرنے کے لئے استعمال کیا تھا۔ اگر آپ نے مختلف طریقوں کے ذریعہ اکاؤنٹ کو مالی اعانت فراہم کی ہے تو، جمع شدہ رقوم کے حساب سے تناسب میں اسی طریقوں کے ذریعہ اپنا منافع واپس لیں۔

  • FBS اکاؤنٹ کو کیسے کھولا جائے؟

    ہماری ویب سائٹ پر ‘اکاؤنٹ کھولیں’ کے بٹن پر کلک کریں اور پرسنل ایریا میں جائیں۔ تجارت شروع کرنے سے پہلے، ایک پروفائل کی تصدیق کروائیں۔ اپنے ای میل اور فون نمبر کی بھی تصدیق کروائیں، اپنی شناختی تصدیق کروائیں۔ یہ طریقہ کار آپ کے فنڈز اور شناخت کی حفاظت کی ضمانت دیتا ہے۔ ایک بار جب آپ تمام جانچ پڑتال کرلیں تو، ترجیحی ٹریڈنگ پلیٹ فارم پر جائیں اور ٹریڈنگ شروع کریں۔

  • ٹریڈنگ کیسے شروع کی جائے؟

    اگر آپ +18 سے زائد کی عمر رکھتے ہیں، تو آپ FBS میں شامل ہوسکتے ہیں اور اپنے FX سفر کا آغاز کر سکتے ہیں۔ ٹریڈںگ کرنے کے لئے، آپ کو ایک بروکریج اکاؤنٹ اور مالیاتی منڈیوں میں اثاثوں کے برتاؤ کے بارے میں مناسب علم کی ضرورت ہے۔ ہمارے مفت تعلیمی مواد اور ایک FBS اکاؤنٹ بنانے کے ساتھ بنیادی باتوں کا مطالعہ بھی شروع کریں۔ آپ ڈیمو اکاؤنٹ کے ذریعہ ورچوئل پیسہ سے اس پورے ماحول کی جانچ پڑتال بھی کرسکتے ہیں۔ ایک بار جب آپ تیار ہوجائیں تو، حقیقی مارکیٹ میں داخل ہوں اور کامیابی کے لئے ٹریڈںگ یعنی تجارت شروع کریں۔

  • لیول اپ بونس کو کیسے فعال کیا جائے؟

    اپنے FBS پرسنل ایریا کے ویب یا موبائل ورژن میں لیول اپ بونس اکاؤنٹ کھولیں اور اپنے اکاؤنٹ میں 140$ تک مفت حاصل کریں۔

ڈپوزٹ کریں اپنے لوکل طریقوں سے۔

ٹیم اسپرٹ کو محسوس کریں

ڈیٹا جمع کرنے کا نوٹس

ایف بی ایس اس ویب سائٹ کو چلانے کے لئے آپ کا ریکارڈ ترتیب دیتا ہے۔ "قبول" کا بٹن دبانے سے آپ ہماری پرائویسی پالیسی پر اتفاق کرتے ہیں۔

دوبارہ کال کریں

ایک مینجر جلد ہی آپکو کال کرے گا

نمبر تبدیل کریں

آپ کی درخواست موصول ہو گئ ہے

ایک مینجر جلد ہی آپکو کال کرے گا

اس فون نمبر کیلئے اگلی کال بیک کی درخواست
۔ میں دستیاب ہوگی

اگر آپ کو کوئی فوری مسئلہ درپیش ہے تو براہ کرم ہم سے رابطہ کریں
لائیو چیٹ کے ذریعے

اندروانی مسئلہ ،تھوڑی دیر بعد کوشش کریں

اپنا وقت ضائع نہ کریں – اس بات پر نظر رکھیں کہ NFP امریکی ڈالر اور منافع کو کس طرح متاثر کرسکتا ہے!

ابتدائی فوریکس گائیڈ بک

فاریکس پر نئے آنے والوں کیلئے یہ کتاب ٹریڈنگ کی دنیا کے بارے میں رہنمائی کرتی ہے۔

ابتدائی فوریکس گائیڈ بک

ٹریڈنگ شروع کرنے کے لئے سب سے اہم چیزیں
اپنا ای میل لکھیں اور ہم آپ کو مفت ابتدائی فوریکس گائیڈ بک بھیجیں گے

شکریہ آپکا ای میل موصول ہو چکا ہے

ہم نے آپ کے ای میل پر ایک خصوصی لنک ای میل کیا ہے۔
لنک پر کلک کریں اور اپنی فوریکس گائیڈ بک وصول کریں۔

آپ اپنے براؤزر کے پرانا ورژن کا استعمال کر رہے ہیں.

اپ ڈیٹ کریں اور محفوظ، مزید آرام دہ، پرسکون اور پیداواری ٹریڈنگ کے تجربے کے لئے ایک کوشش کریں.

Safari Chrome Firefox Opera