غیر متوقع پیشن گوئیاں 2019

غیر متوقع پیشن گوئیاں 2019

ہر کوئی جاننا چاہتا ہے کہ نئے سال سے کیا توقعات رکھی جائیں۔ ٹریڈرز کواس سے الگ نہیں کیا جاسکتا۔ اس بار ہم نے آپ کے لئے کچھ نیا اور دلچسپ بنایا ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ جس چیز کی آپ خود توقع کر سکتے ہیں اس کے بارے میں بات کرنا بیزاری ہے۔ اس لئے ہم نے واقعات اکھتے کئے ہیں جس کی کسی کو توقع نہیں لیکن یہ 2019 میں وقوع پزیر ہو سکتے ہیں اور مارکیٹ کے اتار چڑھاؤ کا باعث بن سکتے ہیں۔

ڈونلڈ ٹرمپ - شاید ایک سب سے دلچسپ امریکی صدر ہیں!

مسٹر ٹرمپ 2018 کے سب سے زیادہ کرشمائی، غیر متوقع، حیران کن آدمی کہلا سکتے ہیں۔ ٹریڈ کی جنگ، تیل کی مارکیٹ کا کریش، پابندیاں، نیا NAFTA یہ سب امریکی صدر کے بارے میں بتاتے ہیں۔ جب سے انہوں نے آفس سنبھالا ہے، ٹرمپ نے باراک اوباما کی طرف سے نافذ کردہ غیر ملکی پالیسی کو رول بیک کرنے کی کوشش کی ہے۔ ایک سخت رویہ رکھنے کے ساتھ ساتھ جب غیر ملکی پالیسی کی بات آتی ہے، ٹرمپ نے ٹیکنالوجی، انرجی، اور فنانس کے سیکٹر میں دلچسپ حکمت عملی عمل میں لانے کی کوشش کی جو امریکی معیشت کی بنیاد سمجھے جاتے ہیں۔ جب کہ ٹرمپ اور اس کی پالیسی تنقید کا نشانہ بھی بنے، امریکی معیشت نے اس کی صدارت کے دوران بہت زیادہ ترقی کی ہے۔

ٹریڈ کی جنگ ڈونلڈ ٹرمپ کے سب سے اہم پاور پلے میں سے تھا جو انہوں نے 2018 میں کیا۔ یہ کہتے ہوئے کہ امریکہ چین کے ساتھ ٹریڈ کرتے ہوئے بہت زیادہ رقم کا نقصان کر رہا تھا، ٹرمپ نے بہت سے ٹیرف کو نافذ کیا۔ امریکہ-چین کی ٹریڈنگ کے ڈیٹا پردیکھتے ہوئے، ہم کہہ سکتے ہیں کہ ٹرمپ کا نقطہ ٹھیک تھا۔ حالانکہ بہت سے ماہرین نے ٹیرف کی وجہ سے امریکی معیشت میں کمی کی پیشن گوئی کی، پر اصل اعداد وشمار اس کے برخلاف نظر آئے۔ مزید، کہ ٹریڈ کی اس جنگ کے دوران امریکی ڈالر ایک محفوظ اثاثے کے طور پر سمجھا جانے لگا تھا۔

ہم سمجھتے ہیں کہ مسٹر ٹرمپ کی یہ قابل ذکر حکمت عملی 2019 میں بھی یہی رہے گی۔ ہم "ایران کی پابندیوں" اور مشرق وسطی کے مسائل پر مزید کہانیوں کی توقع کرسکتے ہیں۔ 2019 کا پینٹاگون کے لئے بڑھتا ہوا بجٹ ایک اہم اشارہ ہے کہ عالمی بحرانوں میں اضافہ ہو سکتا ہے۔ اگر ٹرمپ اپنی حکمت عملی کو مسلسل جاری رکھتے ہیں، تو ہم ایسے سال میں ہو سکتے ہیں جہاں خطرے کی سطح کو کم نہ کیا جاسکے۔ تو یہ خطرات سے بھرے اثاثوں کو نقصان کی طرف لے جاسکتا ہے۔ جس سے محفوظ اثاثوں کی طلب بڑھے گی، اور جس کی وجہ سے ہم گولڈ کی قیمت میں تیز اضافہ دیکھ سکتے ہیں۔

img_sait.jpg

کیا EUR/USD جوڑے کی برابری ممکن ہے؟

2018 کو امریکہ میں سود کی شرح کو بڑھنے کی خصوصیات میں شمار کیا جاتا ہے۔ سال کے نصف سے، امریکی کرنسی کیری ٹریڈ کے لئے منافع بخش کرنسی بن گئی دوسرے ممالک کی غیر یقینی صورتحال اور ان کے کمزور سود کی شرح کی وجہ سے۔

تاہم، 2019 میں صورتحال مختلف ہو سکتی ہے۔ فیڈ کا 2019-2020 میں 3.50% کے اضافہ کی توقع کے باوجود، امریکی معیشیت عالمی ڈیکلیریشن کے ماحول کے درمیان میں سست ہو سکتی ہے۔ یہ قومی قرضے پر منفی اثرات ڈالے گا۔ اس کے نتیجے میں، امریکہ کو اپنا قرض اتارنے کے لئے سستی رقم کی ضرورت ہو گی۔ اس طرح کا مانیٹری پالیسی میں ریٹرن امریکی ڈالر میں سلائڈ کا باعث بنے گا۔

ایک اور اہم عنصر یہ ہے کہ ہمیں سیاسی غیر یقینی کو ذہن میں رکھنا چاہیے۔ ڈونلڈ ٹرمپ بڑے ٹریڈرز کو امریکی ڈالرز کی اپنی چھوٹی پوزیشن زیادہ دیر تک رکھنے کیلئے امتیازی سلوک رکھ سکتے ہیں۔مقداری نرمی کی پالیسی

دوسری طرف، 2018 کے آخر میں، یورپین سینٹرل بینک نے آخر کار اپنی مقداری نرمی کی پالیسی کو آہستہ آہستہ کم کیا ہے۔ جس کے نتیجے میں، 2019 میں، بہت سے سالوں میں پہلی بار ECB نے یورو کو سپورٹ دینے کے لیے سود کی شرح کو بڑھانے کی توقعہے۔ یورو کو باقی دنیا کے ساتھ ٹریڈ کیلئے مرکزی پیمنٹ کی کرنسی کے طور پر سیٹ ہونے کا بھی امکان ہے۔

اوپر والے سب عناصر ذہن میں رکھتے ہوئے، ہم کہہ سکتے ہیں کہ 2019 میں EUR/USD برابری سے بہت دور ہو سکتے ہے۔ اگر اوپر سب امکانات پورے ہو جاتے ہیں، تو یورو USD سے کافی سبقت لے کر 1.30 پر دھکیل سکتا ہے۔

img_sait copy 4.jpg

مالی مارکیٹ کا غدم استحکام گولڈ مارکیٹ کو 2019 کے Q3 میں $1480/آؤنس تک بڑھا دے گا۔

2018 میں امریکہ کی معیشیت بڑھتی رہی ہے۔ 2018 کی دوسری سہ ماہی میں، امریکی جی ڈی پی کا اضافہ 4.2% تک پہنچ گیا جو کہ 2014 کی تیسری سہ ماہی سے سب سے بڑا لیول ہے۔ بے روزگاری کی شرح تقریبا 50 سال میں سب سے کم لیول پر پہنچ گئی، جبکہ اکتوبر میں نوکریوں کی تعداد 25000 تک اور اوسط آمدن 3.1% تک بڑھ گئی، 10 سال میں سب سے زیادہ اضافہ۔

تاہم، 2019 میں معیشیت میں اضافہ اتنا روشن نہیں ہو سکتا جتنا 2018 میں تھا۔ ایسا لگتا ہے کہ مسٹر ٹرمپ کی پالیسی بہت موثر ہے لیکن وہ طویل عرصے کو نظر انداز کرکے اپنی پالیسی کی بڑی قیمت پر غور کئے بغیر جلد کامیابی کا رسک لے رہے ہیں۔ حالیہ پالیسی عالمی مالیاتی سسٹم کو غیر مستحکم بنا سکتا ہے۔ 2018 میں، دنیا کی مالیاتی مارکیٹ ایک افراتفری تھی اور یہ پوری تباہی کی شروعات تھی۔ آخر میں، ڈالر کی طاقت کی خرابی کو تیز کر سکتا ہے۔

فیڈ کے بارے میں کیا خیال ہے؟

مضبوط امریکی معیشت فیڈرل ریزرو کی جانب سے 2018 میں 4 گنا سود کی شرح بڑھا۔ تاہم، ہم سب جانتے ہیں کہ مسٹر ٹرمپ حالیہ فیڈ کی مانیٹری پالیسی سے مطمئن نہیں ہیں۔ اس میں رسک ہے کہ اگر فیڈرل ریزرو اپنی رفتار نہیں بدلتا، چئیرمین کو نکال دیا جائے گا۔ تاہم، صرف مسٹر صدر مانیٹری پالیسی پر دباؤ نہیں ڈالتے۔ بہت سی محتاط ریٹ کی باتیں ہیں جو FOMC کے ممبران میں ہوتی ہیں۔ تاہم، کوئی فرق نہیں پڑتا کہ چاہے فیڈ اپنی رفتار تیز کرے یا چئیرمین کو نکالا جائے، یہ USD کو نقصان پہنچائے گا۔

کیا امریکی ڈالر میں کمزوری گولڈ مارکیٹ میں تیزی کا باعث بنے گی؟

بڑھتا ہوا ڈالر گولڈ کے گرنے میں ایک وجہ تھا۔ تاہم، یہ کہنے کی بہت سی وجوہات ہیں کہ امریکی ڈالر 2019 میں اپنی پوزیشن کھو دے گا۔ مزید برآں، گولڈ نے 2018 میں محفوظ اثاثہ ہونے کا قردار ادا کرنے کو مینج کر لیا ہے۔ جیسا کہ ہم نے پہلے کہا، 2019-2020 کے دوران عالمی مالیاتی مارکیٹ بہت متاثر ہوگی کیونکہ ٹریڈ کی جنگ بڑھ جائے گی۔ دنیا میں ان خطرات کے پیش نظر گولڈ مارکیٹ کے لئے بہتر صورتحال ہوگی۔ جس کے نتیجے میں،XAU/USD کا جوڑا 2019 کی تیسری سہ ماہی میں $1480/آؤنس پر پہنچ سکتا ہے۔

img_sait copy 2.jpg

کرپٹو کے لئے صرف ایک امید

ہمارے خیال میں، یہ سوالات ہیں کہ "کیا بٹکوائن اگلے سال اپنی قیمت کو بحال کر پائے گا" یا "کیا بٹکوائن $2000 تک پہنچے گا" کرپٹو کمیونٹی میں سب سے زیادہ مشہور یہی سوالات ہیں۔ آئیے 2019 میں کرپٹو کرنسی کے مستقبل پر تھوڑی روشنی ڈالتے ہیں۔

پرانی کرپٹو کرنسی نے 2018 میں بہت نقصان اٹھایا ہے، جنوری میں $17200 کی اونچائی سے دسمبر $3200 کی نچلی سطح تک گرنا۔ اس مارکیٹ میں مندی کی بہت سی وجوہات یہ تھیں کہ، تجزیہ نگار ڈیجیٹل اثاثوں پر زیادہ ٹیکسوں کے نام پر بہت خوفزدہ ہیں۔ ڈونلڈ ٹرمپ کے ٹیکس کے منصوبہ پر دستخط کے بعد جس نے کرپٹو کے تمام اثاثوں کو ٹیکس کے قابل بنا دیا، سرمایہ کاروں نے اپنی ہولڈنگ میں اعتماد کھو دیا، جس کے نتیجے میں کرپٹو کو بیچنا شروع کردیا۔

مسٹر ٹرمپ کی ایک نئی چال؟

ستم ظریفی یہ ہے کہ بڑے بینک ٹرمپ کے ایکشن کو ایک اہم عناصر سمجھتے ہیں جو کہ 2019 کے شروع میں بٹکوائن کی قیمت کو اضافہ کی طرف دھکیلے گا۔ ممکن امتیاز کا سامنا کرنے کے بعد (جی ہاں یہ ممکن ہے)، ٹرمپ کرپٹو ٹیکس کی واپسی کا اعلان کر کے عوام کی ہمدردی لے سکتے ہیں۔ تجزیہ نگاروں کے مطابق، وہ یہ درد 2017 میں بٹکوائن کو انوسٹ کر کے کچھ دیر کے لئے سہہ رہا ہے۔ وہ کرپٹو اور بلاک چین کو یو ایس اور دوسرے ممالک میں ٹریڈ کے تعلق کے لئے بہترین بنیاد بنائے گا۔ اس لئے بٹکوائن کی قیمت 2019 فروری-اپریل میں $10000 تک اضافہ کی توقع ہے۔

تاہم، یہ خوشی شاید زیادہ دیر نہ رہے۔ حالیہ خبر کے مطابق،ایران، جو کرپٹو کو قبول کرنے والی کرنسی سے ہے، اس نے جون 2019 سے یو ایس سینکشنز کو نظر انداز کرنے کے لئے کرپٹو کرنسی کو استعمال کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔ یہ وینیزولا کی اپروچ کو فالو کریں گے اور خام قیمت پر اپنی کرنسی بنائیں گے۔ ایران آست یو ایس ڈالر کی جگہ تیل کے آپریشن کو کرنے کے لئے استعمال کرے گا۔ اگر ایران اس کو ممکن بنا دیتا ہے، یہ امریکی صدر کو کرپٹو اثاثوں میں مایوس کرے گا۔ اس کا مزید ردعمل بٹکوائن کی قیمت کو واپس $6000 کے قریب لے جائے گا۔

img_sait copy.jpg

کیا ہو گا اگر RBA اپنی مانیٹری پالیسی کو مزید آسان کر دیتا ہے؟

آسٹریلیا کے ریزرو بینک نے اگست 2016 سے سود کی شرح کو روک رکھا ہے۔ مزید برآں، یہ ،نومبر 2010 سے ریٹ میں مہنگائی نہیں ہے۔ سینٹرل بینک معیشیت کے ڈیٹا پر کمزور AUD کے مثبت اثرات کو واضح کرتے ہوئے سود کی شرح نہیں بدلتا۔

مارکیٹ کیا توقع کرتی ہے؟

اگرچہ RBA غیر یقینی اور مانیٹری پالیسی کی آسانی میں تسلسل کو کلیم کرتا ہے، مارکیٹ ریٹ کے اضافہ کی 2019 میں امید کرتی ہے، اور حتی کہ اگر ریٹ کی مہنگائی 2019، 2020 میں نہیں ہوتی اس کو اضافہ لانا چاہیے۔

لیکن کیا اگر سینٹرل بینک مزید مایوس ہو جاتا ہے اور سود کی شرح کرو کم کر دیتا ہے؟

یہ 4 وجوہات پر ہو سکتا ہے۔پہلی وجہ کمزور معیشیت کا ڈیٹا ہے۔ اس کے باوجود کہ سینٹرل بینک آسٹریلین ڈالر کا کم ریٹ معیشت کو بڑھانے میں مدد دیتا ہے، اصل اعداد وشمار اس کی تصدیق نہیں کرتے۔ گھروں کی گرتی ہوئی قیمتیں، کمزور افراط زر، اور آسٹریلین معیشت میں بہت زیادہ کمی سود کی شرح کو کم کرنے کے اہم عناصر ہیں۔

دوسری وجہ ٹریڈ کی جنگ کا ممکنہ اضافہ ہے۔ ٹریڈ کی جنگ امریکہ اور چین کے درمیان آسٹریلین ڈالر کے لئے بہت زیادہ منفی ہے کیونکہ چین آسٹریلیا کا بڑا ٹریڈ پارٹنر ہے۔ اس کے نتیجے میں، سینٹرل بینک کی محتاط آواز غالب آسکتی ہے۔

تیسری وجہ عالمی معیشت کی خرابی کے رسک میں ہے۔ اس لئے، رسک کی بھوک میں کمی 2018 کی نسبت زیادہ بڑی ہو سکتی ہے۔ عالمی معیشت کا غیر استحکام اور AUD کا پلنج ریزرو بینک کو اس کی پالیسی کو مزید آسان بنانے دے سکتا ہے۔

فیڈ مانیٹری پالیسی آخری لیکن کم نہیں ہے۔ فیڈرل ریزرو 2018 میں اہم طور پر سود کی شرح بڑھاتا ہے۔ تاہم، رسک ہے کہ یہ رفتار 2019 میں کم ہو جائے گی۔ جس کے نتیجے میں، سود کی شرح میں فرق بڑھنا کم ہو جائے گا، RBA کو اس کی ڈھیلی مانیٹری پالیسی رکھنے دیتے ہوئے۔ مزید برآں، جیسا کہ سینٹرل بینک 2.5 سال سے زیادہ سود کی شرح کو ایک جیسا رکھنے ہوئے ہے، اگر ریٹ کٹ ہو تو یہ زیادہ حیران کن نہیں ہو گا۔

گرنا کب متوقع ہو سکتا ہے؟

آسٹریلین ڈالر/یو ایس ڈالر نے اکتوبر 2018 سے ریکور ہونا شروع کر دیا۔ ریٹ کٹ کی صورت میں، ریکوری رک جائے گی۔ اس صورتحال میں 0.6345 کا گرنا ممکن ہو گا۔

img_sait copy 3.jpg

 کیا ہو گا اگر UK اور EU ۔ 29 مارچ، 2019 کو بریکسٹ ڈیل پر متفق ہونے پر ناکام ہو گئے۔

2018 کے دوران برطانوی پاؤنڈ بریکسٹ نیگوشی ایشن کی طرف سے بہت زیادہ دباؤ میں تھا جو اس نے آج تک سہا اور یہ حیران کن نہیں تھا کیونکہ نیگوشی ایشن کی آخری تاریخ 29 مارچ، 2019 ہے۔ وقت گزر جاتا ہے لیکن معاہدہ گزر جاتا ہے۔ بریکسٹ ڈیل کے لئے حتمی پارلیمنٹ ووٹ 11 دسمبر کو پلان کیا گیا تھا، تاہم، تھریسا اسے منسوخ کر سکتی ہیں۔ کیوں؟ کیونکہ PM جانتی ہے کہ ڈیل نا قبول ہو جائے گی۔ اس کے نتیجے میں، EU کیساتھ مزاکرات واپس ہوا جا سکتا ہے۔

UK کیلئے برے ترین امکانات۔

پہلا منظر نامہ دوسرا ریفرینڈم ہے۔ جب کہ مسٹریس مئے دوسرے ریفرینڈم کے امکان کو ذہن میں نہیں رکھتی، یہ ہو سکتا ہے۔ دوسرا ریفرینڈم مارکیٹ کیلئے مزید غیر یقینی صورتحال کا باعث بنے اور UK کی حکومت میں خرابی کا بھی۔ مزید برآں، ریفرینڈم کے نتائج غیر متوقع ہو سکتے ہیں۔ اگر کوئی فیصلہ ہو کہ UK اب بھی EU چھوڑ سکتا ہے، تو ملک واپس وہاں آ جائے گا جہاں پہلے تھا۔ اگر لوگ EU میں رہنے کا ووٹ دیتے ہیں، تو برطانوی حکومت گر سکتی ہے۔

دوسرا منظر نامہ پہلے سے متصل ہے۔ UK ریفرینڈم کے بغیر EU میں رہنے کا فیصلہ کر سکتا ہے۔ کیا آپ سمجھتے ہیں کہ GBP کو یہ سپورٹ کرے گا؟ بہت مشکل ہے۔ برطانوی معیشت اور پاؤنڈ بریگزیٹ ڈیل کی وجہ سے بہت نقصان میں ہے۔ اگر آخر میں، ملک کو ڈیل نہیں ملتی، UK گورنمنٹ کریش ہو جائے گی جو برطانوی کرنسی پر منفی اثرات ڈالے گی۔

تیسرا اور بدترین منظر "کوئی معاہدہ نہیں" ہے. UK جون 2016 سے بریگزیٹ کے لئے لڑ رہا ہے۔ اگرملک EU کے ساتھ کسی بھی معاہدے پر اتفاق کرنے میں ناکام ہوا تو، یہ برطانوی پونڈ کے کا ایک اور خاتمہ ہو گا اور یہ تب تک جاری رہے گاجب تک کہ جماعتوں کے درمیان تعلقات میں کوئی یقینی ہے۔

ایک نتیجے پر پہنچتے ہوئے، ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ اگر UK اورEU کسی معاہدے پر نہیں آسکتے تو، برطانوی حکومت، معیشت، اور پونڈ کریش ہوجائے گی۔

 img_sait copy 6.jpg

2019 تیل کے لئے ایک چیلنج والا سال ہو گا۔

والاٹائیل اشیاء تاجروں کے لئے بہت دلچسپی رکھتے ہیں۔ چلو ماضی پر نظر دوڑائیں اور آئندہ کے امکانات کو دیکھتے ہوئے مستقبل کی مارکیٹ میں تیل کی فراہمی کی آؤٹ لائن بنائیں۔

2018 کی کہانی

2014 میں $ 100 سے زائد ایک بیرل کی قیمت تیل کے لئے ناقابل یقین عیش ہے۔ 2018 میں، برینٹ صرف $ 90 تک پہنچنے میں کامیاب ہوا۔ ستمبر کے اختتام تک خام قیمتیں بڑھ رہی تھیں۔ مارکیٹ کی حمایت پٹرولیم کی ایکسپورٹ آرگنائزیشن ممالک (کم از کم او پی ای سی) اور اس کے اتحادیوں کے ساتھ ساتھ ایران پر امریکی پابندیوں کی پیداوار میں کمی کی وجہ سے کی گئی تھی۔ صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ابھارنے والے ٹویٹس غیر معمولی قیمت میں اتار چڑھاؤ کی وجہ بنا۔ اس کے بعد عوامل جنہوں نے تیل کو اوپر دھکیلا وہ غلط ثابت ہوگئے اور اس کی قیمت اس کی قیمت کا تیسرا حصہ کھو گیا۔

اگلے سال میں

اگرچہ OPEC کی جنوری سے شروع ہونے والی نئی حدود کا اعلان کرنے کے بعد تیل کا توازن دوبارہ بنے گا، یہ حمایت نازک لگ رہی ہے۔ اپریل میں آئل برآمد کرنے والوں کے معاہدے کا جائزہ لیا جائے گا۔ امریکہ ایک ہی وقت میں ایرانی تیل درآمد کرنے کے لئے آٹھ ممالک کو دی گئی ایگزیمپشن پر غور کرے گا۔ ڈونلڈ ٹرمپ نے واضح طور پراس خواہش کا اظہار کیا ہےکہ تیل کی قیمتیں کم اور $ 80 برینٹ کے لئےاور $ 70 ڈبلیو ٹی آئی کے لئے ان کی چھت کی طرح نظر آتے ہیں۔ امریکہ خود بہت زیادہ تیل پمپ کر رہا ہے اور 2019 میں ممکنہ طور پر مزید پیدا کرے گا۔ اسی وقت، گزشتہ چند برسوں میں تیل کی طرف سے تیل کی ٹھوس مانگ عالمی سطح پر مالیاتی سستی کو کم کر سکتی ہے۔ اس نتیجے میں ذیادہ سپلائی خام قیمتوں کو منفی دباؤ میں رکھنا ہے، اگرچہ قیمتیں گرنے کے بعد اس قیمت میں کمی کی وجہ سے ڈیمانڈ بڑھ جائے گی۔ سب کے سب،2019 کیلئے ایک بیرل $ 70- $ 50 برین خام تیل کی قیمت کی رینج ہے۔

بدترین صورت حال کا منظر: OPEC الگ ہوجاتا ہے تو

قدرتی وسائل کے انتخاب کا اہم اصول سب سے بہتر طور پر رہنے کے قابل سمجھا جاتا ہے۔ یہ واضح ہے کہ OPEC یا تو بڑھنے یا ختم ہو جائےگا۔ اس کے ممالک فی الحال قومی اختلافات اور سیاسی تنازعات کے مقابلہ میں تقسیم ہوئے پڑے ہیں۔ سعودی عرب اور ایران ایک دوسرے سے نفرت کرتے ہیں، اور قطر پہلے ہی چھوڑ گیا ہے۔ یونائیٹڈ اسٹیٹس اور روس کے برعکس، OPEC ممالک کم لاگت کی پیداوار کے مقابلے کا فائدہ نہیں اٹھاتے۔ یہ رجحان OPEC کا تیل پر عالمی معیشت کے انحصار کے خاتمے کے لئے ہے۔ اس کے نتیجے میں، بلاک اپنی مارکیٹ شیئر اور قیمتوں پر اثر انداز کرنے کی صلاحیت کھو دے گا۔ OPEC کی تیل کی مارکیٹ میں خاتمے کا کیا مطلب ہے؟ اگر مرکزی پیداوار میں کمی کا خاتمہ ہوا تو، خام قیمت کے نیچے سے رگ کھینچے گا اور 50 فیصد قیمت کریش کا سبب بنے گا۔

img_sait copy 5.jpg

P.S۔: ان اندازوں پر دیکھتے ہوئے یہ مت بھولیں کہ ہم نے غیر متوقع مواقع سوچے ہیں۔ ان کا امکان بہت زیادہ نہیں لیکن یہ ہوسکتے ہیں، یہ مارکیٹ میں اہم تبدیلیاں لاسکتے ہیں۔

اسی طرح

ڈپوزٹ کریں اپنے لوکل طریقوں سے۔

دوبارہ کال کریں

ایک مینجر جلد ہی آپکو کال کرے گا

نمبر تبدیل کریں

آپ کی درخواست موصول ہو گئ ہے

ایک مینجر جلد ہی آپکو کال کرے گا

اندروانی مسئلہ ،تھوڑی دیر بعد کوشش کریں

اہم چیزیں شروع کرنے کیکے
اپنا ای میل لکھیں اور مفت فوریکس گائیڈ بک وصول کریں

فاریکس پر نئے آنے والوں کیلئے یہ کتاب ٹریڈنگ کی دنیا کے بارے میں رہنمائی کرتی ہے۔

اہم چیزیں شروع کرنے کیکے <br> اپنا ای میل لکھیں اور مفت فوریکس گائیڈ بک وصول کریں

کتاب حاصل کرنے کیلئے اپنا ای میل داخل کریں

شکریہ آپکا ای میل موصول ہو چکا ہے

۔لنک پر کلک کریں اور اپنی فوریکس گائیڈ بک وصول کریں۔

آپ اپنے براؤزر کے پرانا ورژن کا استعمال کر رہے ہیں.

اپ ڈیٹ کریں اور محفوظ، مزید آرام دہ، پرسکون اور پیداواری ٹریڈنگ کے تجربے کے لئے ایک کوشش کریں.

Safari Chrome Firefox Opera